Youth Voices

مسا فرٍ زیست

By Fatima Aneela

Image by the Author
Source: Internet

ڈوب جاے نہ کھیں لب ساحل
ھے مسافر زیست کو ٰیھی ڈر

بنا رھبر ڈھونڈتا ھے بے نشان منزلیں
کیا خبر، کہ ملتا نھیں ساحلوں میں گوھر

اے نادان،در بحر سمجھتا نھیں سکون سماویٰ کو
یہ درون آب پالتا ھے کوِِِیؑ طوفان، بیش تر

اسیرٍ تمنا، حسن منزل کے واسطے ھے بے صبر کیوں؟
نےخبر نہ خود آگاہ، کہ خود سفر ھے حسین تر

پریشاں خیال کہ یہ وسعت افلاک ھے یا وسعت بحر؟
اور راز فقط یہ کہ وسیع ھے انساں کی نظر

فاطمہ انیلہ – اسلام آباد